MUET organizes IEEEP 33rd all Pakistan Engineering Students Seminar and CPEC University Support Program lecture

PR: While speaking about university Support program (CUSP), Consultant China-Pakistan Economic Corridor (CPEC) at Higher Education Commission (HEC) Islamabad Lt-Gen (retired) Muhammad Asghar said that the HEC would enhance the potential of higher education institutions for supporting socio-economic transformation under CPEC with a focus on development of quality human resource, civilizational harmony and knowledge inputs.

“CUSP means a turning point that manifests transition from historical period to the next,” he said this while speaking as guest of honour to participants of a program titled 33rd IEEEP (Institution of electrical & electronic Engineers Pakistan, Karachi center) All Pakistan Students’ Seminar in collaboration with Faculty of Electrical, Electronic and Computer Engineering Mehran University of Engineering and Technology (MUET) Jamshoro held at main auditorium of MUET .

Consultant CPEC Lt-Gen Muhammad Asghar threw light on planning parameters of Pakistan vision 2025 that there were seven pillars or priority areas including first connectivity: modernizing transport infrastructure and regional connectivity to support economy that is well-integrated with regional development like CPEC.

He said that secondly people first consisted of developing social and human capital and empowering women; thirdly growth:  sustained indigenous and inclusive growth while protecting natural resources and addressing impact of climate change; fourthly governance: democratic governance, institutional reforms and modernization of public sector. He said that fifthly pillar included security: energy, water and food security, sixthly entrepreneurship: private sector and entrepreneurship growth and seventhly and finally knowledge economy: developing competitive knowledge economy through value addition.

He also highlighted planning parameters of sustainable development goals (SDGs) encompassing no poverty; zero hunger; good health and well-being; quality education; gender equality; clean water and sanitation; affordable and clean energy; decent work and economic growth; industry, innovation and infrastructure and reduced inequalities. He continued SDGs by including sustainable cities and communities; responsible consumption and production; climate action; life below water; life on land; peace, justice and strong institutions and partnerships for the goals.

He said that CPEC long-term plan had another seven facets consisting of connectivity including infrastructure for integrated transport system and establishment of digital corridor; energy-related infrastructure; trade and industrial parts; agriculture and poverty alleviation; tourism and development of ocean economy; cooperation in areas concerning people’s livelihood and non-governmental exchanges and financial cooperation and border management. He divided the CPEC long-term plan into timelines — short-term, mid-term and long-term from 2020 to 2030.

Speaking as chief guest, IEEEP president and National Transmission Dispatch Company (NTDC) technical general manager Dr Rana Abdul Jabbar Khan said that this event gave opportunity to all young students and future engineers to present their project based research work which could lead towards conducting collaborative industrial research in order to meet indigenous technological needs of the country.

He said that IEEEP recognized this significant contribution and hoped its continuity in future. He congratulated all those who were part of this institution, organizing committee, technical experts while providing technical support for arranging this mega event.

Thanking all guests and organizing committee, MUET vice chancellor Prof Dr Muhammad Aslam Uqaili said that the university transformed and evolved from undergraduate degree awarding institute to research one (university) in the past 10 years. “MUET is committed to raise research quality by employing PhD’s in conventional fields as well as in emerging areas of engineering and technology,” he said. He stated that students of the varsity regularly had been participating in IEEEP students seminar as it is an honour for MUET to hold this event.

“IoT (Internet-of-Things), cloud and big data are distinct technologies that have proressed separately with passage of time. Recently, it is observed that these technologies are getting interdependent to each other by means of processing information through connected mediums,” Sungkyunkwan University Seoul South Korea department of computer education PhD assistant professor Dr Nawab Muhammad Faseeh Qureshi said.

He stated that recent research challenges in resolving convergence problems during large-scale data processing in a distributing big data environment. He illustrated cloud, big data and IoT with examples.

MUET Faculty of Electrical, Electronic and Computer Engineering Dean and distinguished national professor Dr Bhawani Shankar Chowdhry who was also Chief Organizer and technical coordinator of the seminar gave awards and certificates to guests and participations, while engineer Dr Farzana Rauf Abro who was the convener of the seminar paid a vote of thanks. Prof Dr BS Chowdhry informed that it is first time that 20 groups of final-year students belonging to 13 national and international, public and private universities presented their research papers on various topics during two technical sessions and masters students were also invited to submit their posters for the competition.

Later on, MUET Pro vice chancellor Dr Tauha Hussain Ali inaugurated poster exhibition held at gallery of main auditorium varsity (MUET) where he encouraged around 45 participants who were final-year and Masters students of various national private and public varsities in the country. The IEEEP Chairman Engr Irfan Ahmed thanked Vice Chancellor MUET and Dean FEECE Prof BS Chowdhry for organizing the great event in befitting manner  having participation of  more than 600 students, faculty members, and professional from Industry.

Engr Naveed Ansari, IEEEP Vice President South announced the result of Winners in the paper and posters competition.

Reference: www.technologytimes.pk

بیماری یا درد میں اپنے پیاروں کا ہاتھ تھامیئے اُن کی تکلیف کم کیجیئے

درد اور بیماری میں اپنے عزیز کا ہاتھ تھامنے سے تکلیف میں مبتلا افراد سے آپ کی ذہنی ہم آہنگی بڑھتی ہے اور اس سے درد کم کرنے میں مدد ملتی ہے۔

امریکی ماہرین کی جانب سے ایک تحقیقی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اگر آپ بیماری یا تکلیف میں اپنے کسی پیارے کا ہاتھ تھامتے ہیں تو اس سے نہ صرف سانس اور دل کی دھڑکن بھی ایک جیسی ہوجاتی ہے بلکہ دونوں کی دماغی سرگرمیوں کی لہریں بھی ہم آہنگ ہوجاتی ہیں۔

 ماہرین نے اس حیرت انگیز بات کا انکشاف آن لائن تحقیقی جریدے ”پروسیڈنگز آف دی نیشنل اکیڈمی آف سائنسز“میں شائع شدہ رپورٹ میں کیا ہے۔

یہ مطالعہ یونیورسٹی آف کولوراڈو بولڈر اور یونیورسٹی آف ہائیفا کے ماہرین نے مل کر انجام دیا ہےجس میں دیکھا گیا کہ صرف ہاتھ تھامنے کے عمل سے بھی دوسرے کے درد میں کمی واقع ہوتی ہے کیونکہ دونوں کی دماغی امواج تک ایک ہی طرز پر کام کرنے لگتی ہیں۔

 ذہنی امواج کی یکسانیت سے تکلیف کم ہوتی جاتی ہے۔

اس مطالعے کے مرکزی مصنف پیول گولڈسٹائن کہتے ہیں کہ لوگ مریضوں سے بات چیت تو کرتے رہتے ہیں لیکن جسمانی طور پر انہیں لمس اور چھونے کا احساس فراہم نہیں کرتے اور ہم انسانوں پر اس کا مثبت اثر ہوتا ہے۔

 اس لیے ہماری تحقیق درد میں مبتلا دوسرے شخص کےلیے چھونے کے احساس کی اہمیت بیان کرتی ہے۔اس عمل میں ایک دماغ دوسرے دماغ سے ہم آہنگ ہوتا ہے جسے ’باہمی یکسانیت‘ کہا جاتا ہے۔

 مثلاً درد کے وقت اگر شوہر بیوی کا ہاتھ تھامے تو اس سے بہت فرق پڑتا ہے۔ اسی طرح اگر خاتون بچے کو جنم دے تو اس دوران مرد کا ہاتھ تھامنے سے بھی درد زہ بہت کم ہوسکتا ہے۔

ماہرین نے 23 سے 32 سال کے جوڑوں پر اس کے تجربات کیے جو ایک سال تک جاری رہے۔ اس میں مرد اور عورت کو معمولی تکلیف دی گئی اور شوہر اور بیوی کو ایک دوسرے کے ہاتھ تھامنے کا کہا گیا۔ اس دوران دیکھا گیا کہ ہاتھ تھامنے کے بعد ہی دونوں کے دماغ میں ”الفا می (Alpha Mu) کہلانے والی خاص سرگرمی ہم  آہنگ ہوتی چلی گئی اور درد محسوس کرنے والے کو اس کا کم احساس ہوا۔

 اسی طرح مرد اور عورتوں کو باری باری معمولی تکلیف سے گزارا گیا اور ان کے ہاتھ تھامنے اور نہ تھامنے کے دوران دماغی سرگرمیوں کو نوٹ کیا گیا۔اس تحقیق سے ظاہر ہوا کہ تکلیف کے موقع پر اگر آپ اپنے عزیز کا ہاتھ تھامتے ہیں تو اس سے درد کی شدت میں کمی واقع ہوتی ہے۔ ماہرین نے اس سے بڑھ کر یہ بھی کہا ہے کہ ہاتھ تھامنے سے مریض پر مزید حیرت انگیز اثرات مرتب ہوتے ہیں جن پر اگلے مرحلے میں تحقیق کی جائے گی۔

Reference: http://www.trt.net.tr/urdu

Jazz Smart School Program Launched to Impart Quality Education

PR:  In support of the Government’s Vision 2025, Jazz Foundation is set to use innovation in imparting education to 75 schools in the Federal Capital under its ‘Jazz Smart School’ program. Launched in partnership with the Capital Administration and Development Division (CADD) and the Federal Directorate of Education (FDE), the ‘Jazz Smart School’ program introduces a smart learning solution to the traditional schooling system through a digital learning platform.

To implement this digital learning solution, the Telco has teamed up with Knowledge Platform, a Singapore based learning solutions company. Knowledge Platform provides the program with the digital learning platform, customized educational content, training and support, while Jazz Foundation has set up digital learning centers with hardware kits that include laptops, projectors, clickers, tablets, speakers, UPS and mobile broadband.

Speaking at the program’s launch event, Ali Naseer, Chief Corporate and Regulatory Affairs – Jazz, stated, “35% of Pakistan’s population is under the age of 14, and we realize that if efforts are not made to improve access to quality education, the country will lag behind in an increasingly digital world. The Jazz Smart School program leverages our mobile broadband strength and other resources to give those in need the tools necessary for success.” 

“After careful analysis of the program’s success in Islamabad, we will look to expand it nationwide, so more students can reap its benefits,” He further added.

Country Manager, Knowledge Platform, Talhah Munir Khan speaking about Knowledge Platform’s vision for education in Pakistan, said, “Educating our youth is a key responsibility we should all take seriously. Knowledge Platform provides quality learning solutions in a bid to modernize and improve how Pakistani students learn. To be successful in this endeavor, we all need to collaborate across sectors: public, private, non-governmental. It requires a concentrated effort of coming together on all our parts and I’m so pleased that this is beginning to happen.”

Director General of FDE, Hasnat Qureshi, added, “The Federal Directorate of Education is committed to ensuring that innovative learning methods are incorporated in our public schools to ensure that our youth, especially young women, can compete with students globally.”

State Minister of CADD, Dr. Tariq Fazal Chaudhry, talking about public-private partnerships, stated, “The Constitution mandates that the State shall provide education for all Pakistani children between the ages of 5-16 years. The government understands the challenges we face while trying to achieve this goal. However, initiatives such as the Jazz Smart Schools Program, and an increasing future emphasis on public-private partnership will surely propel us toward a brighter future for Pakistan.”

The program’s educational content includes digital textbooks, videos, practice material, interactive games, assessment and classroom activities. For each subject in a curriculum, the program begins by gathering inputs from multiple sources to create a catalog of mastery skills and for each skill, a learning video and an assessment is created.

To enhance teaching skills, the program offers training videos, a customized teacher training program and support of an online community. In-built performance dashboards increase accountability as parents and relevant stakeholders can monitor progress of schools, teachers and students on a daily basis through mobile applications.

The Jazz Foundation embodies Jazz’s core values in ensuring all sustainability initiatives are a practical display of ‘innovation, truthfulness, collaboration, customer obsession and entrepreneurship.’ As part of the company’s sustainability strategy, all ongoing and future initiatives under the Foundation will follow the generic theme of empowering youth through technology – a part of Jazz’s group led (VEON) program, ‘Make your Mark.’

Reference: www.technologytimes.pk

بلڈ پریشر بڑھنے کے خطرات کوکم کرنے والی عادات

بلڈ پریشر کو خاموش قاتل کہا جاتا ہے۔ دنیا بھر کی طرح پاکستان میں بھی لوگ تیزی سے بلڈ پریشر کے عارضے میں مبتلا ہورہے ہیں تاہم درج ذیل اچھی عادات سے بلڈ پریشر بڑھنے کے خطرات کم کرنے میں بہت مدد مل سکتی ہے۔

اہلِ خانہ اور دوستوں کے ساتھ وقت گزاریئے

تحقیق کے نتیجے میں میہ بات سامنے آئی ہے کہ گھروالوں سے بات چیت اور دوستوں کی بے تکلف گفتگو سے عین وہی فوائد حاصل ہوتے ہیں جو کسی درد کش دوا کے ہوسکتے ہیں۔

اسی بنا پر دوستوں اور اہلِ خانہ کے ساتھ وقت گزارنے کا کوئی لمحہ ضائع نہ کیجیے۔ اسی طرح بات چیت کرنے سے دماغی سکون ملتا ہے اور دل کے امراض کے خطرات بھی چھٹ جاتے ہیں۔

مشہور مایو کلینک کا مشورہ ہے کہ روزانہ 15 سے 20 منٹ پرسکون انداز میں بیٹھ کر لمبی گہری سانسیں لیجیے کیونکہ اس سے بھی بلڈ پریشر معمول پر رکھنے میں مدد ملتی ہے۔ زندگی کی نعمتوں کا شکر ادا کیجیے اور لوگوں کی مدد کرکے سکون حاصل کیجیے۔ قلبی اطمینان دل و خون کے نظام کےلیے بہت ضروری ہے۔

ورزش اور چہل قدمی

جسمانی طور پر آپ جتنے زیادہ متحرک اور سرگرم ہوں گے، دل کو خون پمپ کرنے کےلیے اتنی ہی کم مشقت کرنا ہوگی۔ اس لیے چہل قدمی اور ورزش کو نظر انداز نہ کیجیے۔

دل ایک پمپ ہے اور اس کی صحت کےلیے ورزش اور تیز قدموں کی دوڑ بہت ضروری ہے۔ حال ہی میں ایک تحقیق ہوئی ہے کہ اگر درمیانی عمر کی خواتین و حضرات ایئروبکس ورزشوں کی عادت ڈال لیں تو زندگی میں مسلسل بیٹھے رہنے اور بے عملی سے ہونے والے نقصان کو کم کیا جاسکتا ہے۔

ہفتے میں تین سے چار دن تیز قدموں سے نصف گھنٹے کی واک بھی دل اور بلڈ پریشر کےلیے بہت مناسب اور مفید ثابت ہوسکتی ہے۔ اگر آپ نے کئی برسوں سے ورزش نہیں کی تو آج سے شروع کرکے ماضی کے تمام نقصانات کا ازالہ بھی کیا جاسکتا ہے۔

پیٹ کم کیجیے

پیٹ کی موٹائی میں اضافہ بننے والا ہر انچ کئی بیماریوں کی وجہ بنتا ہے۔ اگر آپ درمیانی عمر میں ہیں تو وزن گھٹانے کی کوشش ضرور کیجیے۔ اس سے دماغ تک خون کی فراہمی بڑھے گی اور خون کی نالیوں پر تناؤ میں کمی واقع ہوگی۔

غذا میں پھلوں اور سبزیوں کی مقدار بڑھائیے، چینی کو خدا حافظ کہہ دیجیے، مکمل گندم اور خشک میوہ جات کی مقدار بڑھادیجیے اور ورزش کو سب سے زیادہ اہمیت دیجیے۔

ایک اور اہم بات یہ ہے کہ کھانے میں نمک کا استعمال کم سے کم کردیجیے۔

ذہنی تناؤ کو خداحافظ

یہ بات اچھی طرح ثابت ہوچکی ہے کہ ذہنی و اعصابی تناؤ اور ڈپریشن بلڈ پریشر پر انتہائی منفی اثر ڈالتے ہیں۔ اس لیے ہمیشہ مثبت اور پرسکون رہتے ہوئے ذہنی تناؤ کو خود سے دور رکھیے۔

اچھی بات یہ ہے کہ اوپر بیان کردہ کئی عادات مثلاً ورزش، سانس کی مشقوں، عزیزوں کے ساتھ وقت گزارنے اور درست غذا کھانے سے ڈپریشن اور تناؤ دور کرنے میں بہت مدد ملتی ہے۔

سگریٹ نوشی ترک کریں

تمباکو نوشی صحت کےلیے کس قدر نقصان دہ ہے؟ ہمیں یہ بتانے کی ضرورت نہیں، لیکن سگریٹ نوشی فوری طور پر بلڈ پریشر میں اضافہ کرتی ہے۔ اس کے علاوہ خون اور خصوصاً دل کی رگوں کو تنگ کرنے میں بھی تمباکو نوشی کا اہم کردار ہوتا ہے۔

Reference: http://www.trt.net.tr/urdu

انگور کھائیے،ڈیپریشن سے نجات پائیے

سائنسدانوں کے مطابق انگوروں میں پایا جانے والا ایک مرکب ڈپریشن کو کم کرنے میں انتہائی مددگار ثابت ہوسکتا ہے۔

یہ کیمیائی مرکب ایک جانب تو ذہنی تناؤ کو برداشت کرنے میں مدد دیتا ہے جبکہ دوسری جانب ڈپریشن لاحق ہونے سے دماغی تبدیلیوں کو نارمل کرسکتا ہے۔

اگر کئی اقسام کے انگور اور ان کے بیجوں میں پائے جانے والے اجزا کو باہم ملا کر استعمال کیا جائے تو اس سے ذہنی تناؤ والے ڈپریشن میں کمی واقع ہوتی ہے۔

ماہرین کے مطابق ڈپریشن اور دماغی تناؤ میں استعمال ہونے والی 50 فیصد ادویہ بہت مؤثر ثابت نہیں ہوتیں اور ان کا استعمال ترک کرتے ہی مریض دوبارہ ڈپریشن میں چلا جاتا ہے۔

نیویارک میں واقع ماؤنٹ سینائی یونیورسٹی میں نیورولوجی کے ماہر گیولیو ماریا پیسی نیٹی اور ان کے ساتھیوں نے ڈپریشن کے علاج کے ایک متبادل طریقے پر کام کرتے ہوئے انگوروں سے اخذ شدہ بعض مرکبات کو استعمال کیا۔ اس سے قبل انگوروں میں موجود ’’پولی فینولز‘‘ نامی مادّے ڈپریشن میں مفید پائے گئے تھے لیکن ان کے دماغ پر اثرات کسی کو معلوم نہ تھے۔

اس ٹیم نے انگوروں سے تین مختلف پولی فینولز علیحدہ کیے اور انہیں ڈپریشن کے شکار چوہوں کو کھلا کر ان تحقیقات کے نتائج ’’نیچر کمیونی کیشنز‘‘ نامی ریسرچ جرنل میں شائع کروائی ہیں۔

مختلف انگوروں سے اخذ شدہ اس شے کو ’بایو ایکٹیوڈائٹری پولی فینول پریپریشن‘ (بی ڈی پی پی) کا نام دیا گیا ہے۔ اس کے علاوہ بی ڈی پی پی کو میٹابولائزیشن کے عمل سے گزار کر دو نئے فائٹو کیمیکلز بھی بنائے گئے اور انہیں آزمایا گیا ہے۔

پھر ان اشیا کو شدید ڈپریشن میں مبتلا چوہوں پر آزمایا گیا تو چوہے ڈپریشن کو اچھی طرح جھیلنے کے قابل ہوئے اور وہ تیزی سے بہتر ہونے لگے۔ اس کے علاوہ ان کے بدن میں سوزش کم ہوگئی اور دماغی خلیات کے درمیان بہتر رابطہ ہوگیا۔ اس تحقیق سے یہ بھی معلوم ہوا کہ انگوروں میں ڈپریشن کا بہت مؤثرعلاج موجود ہوسکتا ہے۔

Reference: http://www.trt.net.tr/urdu