2019 پاکستان میں فائیو جی ٹیکنالوجی کی آمد کا سال

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) پاکستان میں 2019 میں جدید ترین 5 جی براڈ بینڈ ٹیکنالوجی متعارف کرانے کا عندیہ دیا گیا ہے۔ یہ عندیہ وفاقی وزیر برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی نے اے پی پی کو دیئے گئے ایک انٹرویو کے دوران دیا۔ انہوں نے اشارہ دیا کہ فائیو جی سروس کو پاکستان میں اگلے سال متعارف کرایا جاسکتا ہے جس سے غیرملکی سرمایہ کاری بڑھانے میں مدد ملے گی۔

5 جی زندگی میں کیسے انقلاب برپا کرے گی؟ نیشنل ٹیلی کمیونیکشن کارپوریشن ہیڈکوارٹرز میں بات کرتے ہوئے وفاقی وزیر نے کہا کہ ملک میں پہلے ہی تھری جی اور فور جی موبائل براڈ بینڈ ٹیکنالوجی کا کامیاب تجربہ کیا جاچکا ہے اور ہر گزرتے دن کے ساتھ ان سروسز کو استعمال کرنے والوں کی تعداد میں اضافہ ہورہا ہے۔ انہوں نے کہا ‘ہمیں موبائل براڈبینڈ میں مزید نئی سروسز کو متعارف کرانے کی ضرورت ہے جس سے نہ صرف صارفین کو سہولت ملے گی بلکہ غیرملکی سرمایہ کاروں کو متوجہ کرنے اور موجودہ دور کی ضروریات پوری کرنے میں مدد ملے گی’۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا ‘ دنیا بہت تیزی سے بدل رہی ہے اور دیگر اقوام سے مسابقت کے لیے ہمیں نئی ٹیکنالوجیز کو اپنانے کی ضرورت ہے’۔ انہوں نے توقع ظاہر کی کہ غیرملکی کمپنیاں فائیو جی سروس کو متعارف کرانے کے لیے خود رجوع کریں گی۔ وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ پاکستان غیرملکی سرمایہ کاری کے لیے بڑی مارکیٹ ہے اور دنیا بھر میں پانچواں بڑا فری لانسنگ ملک ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اسمارٹ فون اور انٹرنیٹ موجودہ عہد کی ضرورت ہے جن کی مدد سے لوگوں کو روزمرہ کے متعدد مسائل پر قابو پانے میں مدد مل سکتی ہے۔ پاکستان میں 5 جی سروسز جلد متعارف کرانا ممکن؟ فائیو جی کیا ہے؟ آج کل وائرلیس فور جی ایل ٹی ای ٹیکنالوجی کو اکثر موبائل نیٹ ورکس پر استعمال کیا جارہا ہے، جو کہ انتہائی تیز وائرلیس کمیونیکشن ڈیٹا ٹرانسمنٹ کرنے کے لیے فراہم کرتے ہیں۔ اس کے مقابلے میں فائیو جی نیٹ ورک کو گھروں پر انٹرنیٹ کی فراہمی کے لیے استعمال کیا جاسکے گا جبکہ اس کی رفتار آنے والے دور کی ٹیکنالوجیز کے لیے بھی موزوں ہوگی، جیسے ڈرائیور لیس کار سسٹم میں ڈیٹا کے لیے درکار اسپیڈ وغیرہ۔ فائیو جی کی رفتار کیا ہوگی ۔

گزشتہ سال اس کی آزمائش کے دوران یہ بات سامنے آئی تھی کہ فائیو جی نیٹ ورک موجودہ موبائل انٹرنیٹ کنکشن سے سوگنا جبکہ گھروں کے براڈ بینڈ کنکشن سے دس گنا تیز ہوگا۔ گزشتہ سال موبائل ورلڈ کانگریس میں سام سنگ نے فائیو جی ہوم روٹر کو پیش کیا تھا جس کی رفتار 4 گیگابائٹس فی سیکنڈ تھی، یا یوں بھی کہا جاسکتا ہے 500 میگا بٹس فی سیکنڈ، جس کی مدد سے پچاس جی بی کی فائل صرف دو منٹ جبکہ سو جی بی کی فلم چار منٹ میں ڈا ون لوڈ کی جاسکتی ہے۔

اس وقت امریکا میں انٹرنیٹ کی اوسط رفتار صرف 55 میگا بٹ فی سیکنڈ ہے۔ تاہم جب فائیو جی ٹیکنالوجی صحیح معنوں میں سامنے آئے گی تو درست اندازہ ہوگا کہ اس کی اوسط رفتار مختلف رکاوٹوں یا لوگوں کے ہجوم کے دوران کیا ہوگی تاہم پھر بھی فور جی ایل ٹی ای سے کئی گنا زیادہ تیز ضرور ہوگی، یعنی اگر پچاس فیصد کم بھی ہوتی تو بھی گھریلو انٹرنیٹ کی رفتار 2 گیگا بائٹس فی سیکنڈ ہوگی جبکہ ایک گیگابائٹ فی سیکنڈ بھی موجودہ تناظر میں زبردست ہی قرار دی جاسکتی ہے۔

The post 2019 پاکستان میں فائیو جی ٹیکنالوجی کی آمد کا سال appeared first on JavedCh.Com.

Reference: JavedCh.Com

PTCL upgrades its CharJi 4G LTE network

PTCL has recently implemented major upgrade of its CharJi 4G LTE network in order to provide hi speed internet in Karachi, Islamabad, Rawalpindi and Peshawar. 

hi speed internet

As part of this process, 3G EVO services in these cities will stop working from 17th September 2018.

PTCL 3G EVO customers can visit any PTCL shop, retail outlet or distributor to exchange the 3G EVO device by giving Rs. 2,500 and get a new CharJi 4G LTE device. Along with that, they will get one month of unlimited internet free on their new CharJi 4G LTE device. Customers can call at 1218 for further information.

PTCL has upgraded the CharJi 4G LTE network considering the ever-growing high speed internet requirements of its customers. The new CharJi 4G LTE device will connect up to 10 devices at the same time.

This offer allows subscribers who upgrade, to browse and stream to their heart’s content for the entire first month. From the second month onwards, the customers will be able to select from a variety of economical and tax-inclusive monthly packages that cater to a diverse range of needs & lifestyles.

The post PTCL upgrades its CharJi 4G LTE network appeared first on Technology Times.

Reference: www.technologytimes.pk

LG builds on successful G7 series platform

LG Electronics will be introducing two exciting additions to the G7 series of smartphones with the LG G7 One and LG G7 Fit at At IFA 2018.

G7 series of smartphones with the LG G7 One and LG G7 Fit at At IFA 2018

Building on the foundation of the advanced LG G7 ThinQ, both of the new phones offer a balance of premium features and exceptional prices for discerning customers.

Many consumers today are turning their attention to legacy flagship smartphones which are seen as offering better values compared to the newest mid-range models.

These customers aren’t satisfied with mediocre components but also don’t want to pay for over-the-top features in some of today’s premium phones that they will never use. The challenge is finding the smartphone with just the right balance.

LG G7 One

The LG G7 One is the first Android One smartphone from LG that brings together the best of the company’s smartphone experience and expertise with Google’s latest smartphone OS innovations.

Designed to be one of the most versatile Android One smartphones on the market today, the LG G7 One sports the proven Qualcomm Snapdragon 835 mobile platform paired with 4GB of RAM and 32GB of internal storage.

It has the same all-glass design aesthetic of the LG G7 ThinQ with a polished metal rim for a sleek and slim appearance that is rated IP68 for dust and water resistance.

The 6.1-inch QHD+ (3120 x 1440) Super Bright Display sporting a 19.5:9 FullVision screen ratio and thin bottom bezel completes the premium style that savvy consumers are looking for.

The LG G7 One runs Android 8.1 Oreo and includes only the most essential apps out of the box, providing users with a smooth and fast smartphone experience. The phone automatically optimizes background activity for the most important operations to maximize battery life.

Users can conveniently access the rich AI experience of the Google Assistant by tapping the dedicated button on the side of the phone. LG’s first Android One phone will receive regular security updates with built-in Google Play Protect for total peace of mind.

Also available on the LG G7 one is Google Lens, Google’s new way to search using computer vision and AI technology. Available from inside the Google Assistant and Google Photos, users can search for information about objects, identify text, visit websites, include business cards in contacts, add new events to the calendar or look up an item on a restaurant menu without any typing.

More consumers are using smartphones as primary devices to enjoy music and movies. The LG G7 One is the perfect companion device for unwinding and relaxing with its 32-bit Hi-Fi Quad DAC for superb sound when paired with quality earphones. The G7 One also delivers virtual 3D sound for all content, up to 7.1 channel audio with DTS:X.

For those who prefer to listen to music without earphones, the LG G7 One also features the unique Boombox Speaker which utilizes the internal space of the phone as a resonance chamber to deliver double the bass and audio of conventional smartphones.

When placed on a solid surface or box, the resonance chamber acts as a woofer to amplify the bass effect even more. AI CAM, first introduced in the LG V30S, will be added with an update later this year.

LG G7 Fit

LG G7 Fit was designed to bridge the gap between mid-range and flagship models, delivering exceptional value and performance as well as key features and innovations introduced in the LG G7 ThinQ.

Featuring Qualcomm Snapdragon 821 coupled with 4GB of RAM and 32GB or 64GB of internal storage, the LG G7 Fit comes with the stunning 6.1-inch LCD FullVision display with QHD+ (3120 x 1440) resolution powered by LG’s exclusive Super Bright Display LCD to delivery an industry-leading 1,000 nits of brightness.

Like the LG G7 ThinQ, the LG G7 Fit offers premium and intelligent features such as AI CAM, 32-bit Hi-Fi Quad DAC, Boombox Speaker and DTS:X 3D Surround Sound.   AI CAM lets users choose from eight shooting categories – person, food, pet, landscape, city, flower, sunrise and sunset – for perfectly optimized shots along with three effects options for even more personalization.

“Both the G7 One and the G7 Fit are designed to allow a broader range of consumers enjoy LG smartphones with proven and flagship-level features,” said Ha Jeung-uk, senior vice president and business unit leader for LG’s Mobile Communications Company. “As the smartphone ecosystem matures, it’s not enough to just offer premium and mid-range phones, there is a growing demand for models in between.”

Visitors to IFA 2018 from August 31 to September 5 can visit LG’s booth in Hall 18 of Messe Berlin to experience and get more information on the LG G7 One and LG G7 Fit. Pricing and other purchase details will be announced locally at the time of availability.

Key Specifications:*

LG G7 One

Chipset: Qualcomm® Snapdragon™ 835 Mobile Platform

Display: 6.1-inch QHD+ 19.5:9 FullVision Super Bright Display (3120 x 1440)

Memory: 4GB LPDDR4x RAM / 32GB UFS 2.1 ROM / MicroSD (up to 2TB)

Camera:

– Rear: 16MP Standard Angle (F1.6 / 71°)

– Front: 8MP Wide Angle (F1.9 / 80°)

Battery: 3000mAh

Operating System: Android 8.1 Oreo (Android One)

Size: 153.2 x 71.9 x 7.9mm

Weight: 156g

Network: LTE / 3G / 2G

Connectivity: Wi-Fi 802.11 a, b, g, n, ac / Bluetooth 5.0 BLE / NFC / USB Type-C 2.0 (3.1 compatible)

Color: New Aurora Black / New Moroccan Blue

Other: AI CAM† / Bright Camera / Boombox Speaker / Google Lens / 32-bit Hi-Fi Quad DAC / DTS: X 3D Surround Sound / IP68 Water and Dust Resistance / HDR10 / Google Assistant Key / Face Recognition / Fingerprint Sensor / Qualcomm Quick Charge™ 3.0 Technology / MIL-STD 810G Compliant / FM Radio

LG G7 Fit

Chipset: Qualcomm® Snapdragon™ 821 Mobile Platform

Display: 6.1-inch QHD+ 19.5:9 FullVision Super Bright Display (3120 x 1440)

Memory:

– LG G7+ Fit: 4GB LPDDR4x RAM / 64GB UFS 2.1 ROM / MicroSD (up to 2TB)

– LG G7 Fit: 4GB LPDDR4x RAM / 32GB UFS 2.1 ROM / MicroSD (up to 2TB)

Camera:

– Rear: 16MP Standard Angle (F2.2 / 76°)

– Front: 8MP Wide Angle (F1.9 / 80°)

Battery: 3000mAh

Operating System: Android 8.1 Oreo

Size: 153.2 x 71.9 x 7.9mm

Weight: 160g

Network: LTE / 3G / 2G

Connectivity: Wi-Fi 802.11 a, b, g, n, ac / Bluetooth 4.2 BLE / NFC / USB Type-C 2.0 (3.1 compatible)

Color: New Aurora Black / New Platinum Gray

Other: New Second Screen / AI CAM / Boombox Speaker / Google Lens / QLens / 32-bit Hi-Fi Quad DAC / DTS: X 3D Surround Sound / IP68 Water and Dust Resistance / HDR10 / Face Recognition / Fingerprint Sensor / Qualcomm Quick Charge™ 3.0 Technology / MIL-STD 810G Compliant / FM Radio

 

The post LG builds on successful G7 series platform appeared first on Technology Times.

Reference: www.technologytimes.pk

Pak IT imports up by 18.5pc

STAFF REPORT IBD:Pakistans imports of Information Technology (IT) and IT enabled service (ITES) went up by 18.5 per cent during the first five months of the ongoing financial year, showing a healthy expansion of business operations of multinational companies.

“Import of IT and IT-enabled services increased to $64 million in Jul-Nov period as compared with $54 million of previous years same period,” show statistics of the State Bank of Pakistan.

The numbers also showed the technology enablement trend of local companies particularly IT applications and solutions in their different sized businesses through foreign companies.

Some of the renowned companies are SAP, Oracle, IBM, Microsoft and TRG, being engaged to provide multiple advanced applications and tailored solutions to tens of companies in sectors including telecom, banking, media, textile, energy and insurance industries.

According to industry experts, these IT companies install and develop software as per needs of the businesses for increasing the efficiency, volume of operations and energy saving in manufacturing and services sectors.

The technology utility empowers local companies operations for boosting their productions in short period and containing their cost of doing business and production on the other hand.

Originally posted 2012-01-02 00:00:00.

The post Pak IT imports up by 18.5pc appeared first on Technology Times.

Reference: www.technologytimes.pk

آپ کے بچے ڈیجیٹل میڈیا پر کیا دیکھ رہے ہیں؟

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) اگر آپ سوچ رہے ہیں کہ اپنے بچے کی ٹیکنالوجی تک رسائی کو محدود کرنے کے لیے کب سے کام کرنا شروع کیا جائے تو دیر مت کیجیے یہی اچھا وقت ہے۔ بچوں اور والدین کے سروے سے پتا چلا ہے کہ والدین اپنے بچوں کو انٹرنیٹ اوسطاً 3 برس کی عمر میں استعمال کرنے کی اجازت دیتے ہیں۔ مزید برآں، جتنا والدین سمجھتے ہیں بچے اس سے دگنا انٹرنیٹ استعمال کرتے ہیں۔

والدین کی جانب سے فونز اور دیگر ڈیجیٹل ڈیوائسز کے لیے کنٹرولنگ ایپس کے باوجود چھوٹے بچے ہر دن اوسطاً 2 گھنٹے اسکرین کے سامنے گزارتے ہیں اور اس دوران، بچے اپنی عمر اور فونز پر گزارے جانے والے وقت کے حساب سے والدین کی جانب سے انسٹال کنٹرول ایپس کا توڑ نکال لیتے ہیں اور ڈیوائسز کے ذریعے خود کو نقصان پہنچانے والی ویڈیوز، فحش مواد، کلینیکل مسائل جیسے کھانے کی عادات میں مسائل اور دیگر مسائل کی نوبت تک پہنچ جاتے ہیں اور ایسی کئی چیزوں تک بھی جو خود ان کے نزدیک دشواری کا باعث بنتی ہیں۔ وہ اکثر اپنی ذاتی معلومات سوشل میڈیا پر شیئر کردیتے ہیں جو دیگر افراد تک پہنچتی ہے اور ان کے لیے بلینگ یا (ہراساں) کیے جانے کی وجہ بنتی ہے۔ یہ کسی بدترین طوفان سے گھرے رہنے سے کم نہیں کیونکہ بچوں کو ڈیجیٹل میڈیا تک کھلی رسائی ہوتی ہے اور وہ اپنی مرضی کے مطابق جو چاہتے ہیں دیکھتے ہیں اور کرتے ہیں۔ جبکہ والدین اس گمان کا شکار ہوتے ہیں کہ بچے انڈر کنٹرول ہیں۔ مگر ڈیجیٹل میڈیا کو باآسانی ’اچھے‘ یا ’برے‘ کا لیبل نہیں دیا جاسکتا۔ اس میں دونوں باتیں ہوسکتی ہیں اور ان میں سے کوئی بات نہیں ہوسکتی۔ ہم جانتے ہیں کہ جگھڑالو ویڈیو گیمز کھیلنے سے رویوں پر بھی جھگڑالو پن پیدا ہونے لگتا ہے۔ جبکہ یہ حقیقت بہت ہی کم لوگ جانتے ہیں کہ پرو سوشل یا سماج پسند ویڈیوز، جن میں ایمانداری، احترام اور رحم دلی کے اسباق شامل ہوتے ہیں۔

دیکھنے سے سماج پسند رویے پیدا ہوتے ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ ڈیجیٹل میڈیا تک رسائی روزمرہ کی تعلیمی اور اسکول کی سرگرمیوں اور تعلیم کے بعد ملازمت کے مواقع کی تلاش کے لیے کافی ضروری ہے۔ بچوں کو نہ صرف ڈیجیٹل میڈیا تک رسائی کی ضرورت اور وہاں کھلنے والی دنیا کی ضرورت ہے بلکہ اس میڈیا کے استعمال کے لیے بچوں میں ضروری قابلیت کا ہونا بھی انتہائی ضروری ہے۔

آپ بچوں کو ڈیجیٹل میڈیا سے مکمل طور پر منقطع نہیں کرسکتے لیکن اگر سمجھتے ہیں کہ اس کی وجہ سے آپ کے گھر میں مسائل پیدا ہورہے ہیں تو مندرجہ ذیل چند تجاویز ہیں جو آپ کو بطور والد یا والدہ بچوں پر ڈیجیٹل میڈیا کے استعمال پر کنٹرول رکھنے کے لیے مفید ثابت ہوسکتی ہیں۔ اسکرین ٹائم محدود کردیں اکثر والدین کو یہ شکایت ہوتی ہے کہ ان کے بچے گھنٹوں، پوری پوری رات، جبکہ چھٹی کے دن

تو پورا دن ہی اسکرین کے سامنے گزار دیتے ہیں۔ کچھ بچے تو اس دوران کھانے کا وقفہ بھی گوارا نہیں کرتے۔ ایسی صورتحال میں اسکرین ٹائمنگ کو محدود کرنا درست ہے۔ مگر بچوں پر یہ پابندیاں کیسے لگائی جائیں، اس کے لیے یا تو والدین کے لیے بنائی گئی پیرنٹل کنٹرول ایپس کی مدد لی جاسکتی ہے یا پھر خود آپ نگرانی کریں۔ یہ پابندیاں نہایت ضروری ہیں۔

اگر اسکرین کنٹرول کے لیے سخت عمل یا بحث کی جائے تو اس کا ردِعمل کچھ اچھا نہیں ہوگا۔ محدود اسکرین کے استعمال کے بارے میں بچوں کو ٹھنڈے دماغ کے ساتھ سمجھانے کی کوشش کریں، ان سے مکالمہ کریں (کبھی بھی بچوں سے ’بس میں نے کہا ہے نا‘ یا میری لاش پر سے گزر کر‘ جیسے سخت جملے نہ بولیں)۔ حتٰی کہ آپ فونز، کمپیوٹرز اور ٹیبلیٹس کے اسکرین ٹائم کو محدود کرسکتے ہیں۔

مگر پھر بھی مکمل کنٹرول حاصل کرنا دشوار مشکل ہے۔ آپ کا بچہ بہت ہوشیار ہے آپ کو یہ بات ذہن میں رکھنی چاہیے کہ آپ کا بچہ کانٹینٹ بلاکنگ کو بھی عبور کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ اکثر والدین کا دعوی ہوتا ہے کہ ان کے بچے محدود وقت ہی ڈیجیٹل میڈیا پر گزارتے ہیں۔ لیکن بچے اب کئی ٹرکس اور چور دروازے جانتے ہیں جو وہ اکثر اپنے ہم عمروں سے سیکھتے ہیں، یوں وہ اپنے والدین کو آسانی سے چکما دے دیتے ہیں۔

لہٰذا والدین کو بچوں کی ایسی ہوشیاری اور ہنرمندی کو لے کر محتاط رہنا چاہیے۔ ایک ساتھ وقت گزاریں کمپیوٹر (یا ٹیبلیٹ یا اسمارٹ فونز) پر ایک ساتھ وقت گزاریں تاکہ آپ ثابت کرسکیں کہ یہ تنہائی میں کی جانے والی سرگرمی نہیں ہے۔ کوئی فلم ایک ساتھ دیکھیں۔ کسی تخلیقی پراجیکٹ پر ایک ساتھ کام کریں۔ کسی نئے باہمی مشغلے یا باہمی دلچسپی کے موضوعات (جیسے کسی ملک، کسی کھیل

، کسی فن، کسی گیم، سپرہیرو، جانور یا کسی خاص موسیقی) کا انتخاب کریں اور پھر اس پر بچے کے ساتھ بیٹھ کر اکھٹا کام کریں۔ اس وقت کو مزیدار بنائیں اور اس دوران امتحانوں، کوئز یا ڈانٹ ڈپٹ کا استعمال نہ کریں۔ بہتر یہی ہے کہ بچے کو خود ہی موضوع تلاش کرنے دیں، مگر اس پر آخری فیصلہ آپ ہی کا ہو۔ یہ جاننے کی کوشش کریں کہ کہیں آپ کے بچے کے رویے میں جھگڑالو پن تو نہیں یا وہ اینگزائٹی کا شکار تو نہیں۔

کیونکہ کسی ویڈیو گیم کا مواد یا دیگر مواد ان پر مزید منفی اثرات مرتب کرسکتا ہے۔ مثلاً لوگ عام طور پر اینگزائٹی اور خوف و ہراس کا شکار اپنے ابتدائی بچپن میں ہوتے ہیں۔ لہٰذا اگر کوئی بچہ ایسے کسی مسئلے کا شکار ہو اور وہ اسکرین پر زیادہ وقت دہشت گرد کارروائیوں، تشدد، موت کے حوالے سے صدمے سے بھرپور اور ہولناک واقعات کے مناظر دیکھتا ہے تو اس کی حالت بد سے بدتر ہوسکتی ہے۔

سمجھانا ہی کافی نہیں والدین کو لگتا ہے کہ ان کا بچے کو خطروں سے آگاہ کردینا اور زبانی سمجھانے سے ہی کام بن جائے گا۔ یقیناً، بچے کو ان تمام باتوں کو تفصیل سے سمجھائیں جن سے اسکرین کے سامنے وقت گزارنے سے زیادہ فوائد حاصل ہوسکتے ہیں۔ مگر والد یا والدہ کی جانب سے ان کے کنٹرول کی ضرورت کو صرف سمجھا دینا ہی عام طو پر بچوں کے رویے میں تبدیلی کا مؤثر طریقہ نہیں ہے۔

اپنے چھوٹے اور بلوغت کی عمر میں پہنچے والے بچوں کے اسکرین ٹائم پر نظر رکھیں اس طرح آپ کا بچہ وہ روجہ اختیار کرنے سے باز رہے گا جس سے آپ اسے باز رکھنا چاہتے ہیں۔ مگر نظر رکھنے کا مطلب بچوں کے آس پاس منڈلانا نہیں ہے بلکہ اس کے بجائے یہ ٹریک ریکارڈ رکھیں کہ آپ کا بچہ کس کے ساتھ بیٹھ کر کیا کر رہا ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ بچے کے ساتھ سرگرمیوں میں براہِ راست شامل ہوجائیں۔

اس طرح بچے ناپسندیدہ رویے کو اختیار کرنے سے باز رہیں گے۔ رویے کا نمونہ پیش کریں آپ اپنے بچے میں کس طرح رویہ دیکھنا چاہتے ہیں؟ آپ جس طرح رویہ دیکھنا چاہتے ہیں اس کا نمونہ ان کے سامنے پیش کریں۔ کبھی کبھار خود والدین ہی اسکرین کے سامنے کچھ ایسی سرگرمیوں میں مصروف ہوتے جن سرگرمیوں سے وہ اپنے بچوں کو دور رکھنا چاہتے ہیں۔ مثلاً بچوں کے ساتھ ایک ہی کمرے میں موجودگی کے باجود اپنی الگ اسکرین پر اجنبیوں کے ساتھ جھگڑالو پن والے گیمز کھیلنا، فحش وڈیوز دیکھنا

، بھلے ہی والدین اپنی الگ اسکرین پر مصروف ہوں مگر بچوں کی نظریں والدین کی اسکرین پر پڑجاتی ہیں، لہٰذا ماڈلنگ یا اپنی شخصیت سے نمونہ پیش کرنا انتہائی اہمیت کا حامل ہے۔ مختصراً کہیں تو ڈیجیٹل میڈیا نے والدین کے لیے نئی پریشانیاں اور خدشات پیدا کردیے ہیں۔ مگر والدین کئی طریقوں سے بچوں کو اس میڈیا کے استعمال کو مثبت انداز میں ایک فیملی سرگرمی کے طور پر لینے پر قائل کرسکتے ہیں اور نئی ٹیکنالوجیز کو زیادہ سے زیادہ علمی اور صحتمند سرگرمیوں کے لیے استعمال کرسکتے ہیں۔

The post آپ کے بچے ڈیجیٹل میڈیا پر کیا دیکھ رہے ہیں؟ appeared first on JavedCh.Com.

Reference: JavedCh.Com