آئی سی سی ورلڈ کپ 2019ء کا وارم اپ مرحلہ جمعہ سے شروع ہوگا

لندن ۔ 22 مئی (اے پی پی) آئی سی سی ورلڈ کپ 2019 وارم اپ میچز کا سلسلہ جمعہ سے شروع ہوگا۔ پاکستان کا مقابلہ افٹانستان سے ہوگا جبکہ جنوبی افریقہ اور سری لنکا کی ٹیمیں دوسرے میچ میں ٹکرائیں گی۔ تفصیلات کے مطابق آئی سی سی ورلڈ کپ 2019ء کے وارم اپ میچز کا مرحلہ 24 مئی سے شروع ہوگا اور 5 روز جاری رہنے کے بعد 28 مئی کو اختتام پذیر ہوگا اس کے بعد ورلڈ کپ 2019ء کا باضابطہ آغاز 30 مئی سے ہوگا۔ 24 سے 28 مئی تک وارم اپ مرحلے میں ہر روز دو، دو میچز کھیلے جائینگے۔ وارم اپ مرحلے کا کل جمعہ کو پہلا میچ پاکستان اور افغانستان کی ٹیموں کے درمیان برسٹل میں کھیلا جائے گا اسی روز دوسرا وارم اپ میچ سری لنکا اور جنوبی افریقہ کی ٹیموں کے درمیان کارڈف میں کھیلا جائیگا۔ اسی طرح 25 مئی کو بھی دو وارم اپ میچز کھیلے جائینگے، پہلا میچ میزبان انگلینڈ اور آسٹریلیا کے درمیان سائوتھمپٹن میں کھیلا جائے جبکہ اسی روز کا دوسرا وارم اپ میچ بھارت اور نیوزی لینڈ کی ٹیموں کے درمیان لندن میں کھیلا جائے گا۔ 26 مئی کو کھیلے جانے والے پہلے وارم اپ میچ میں بنگلہ دیش اور پاکستان کی ٹیمیں آمنے سامنے ہونگی اور یہ میچ کارڈف میں کھیلا جائے گا۔ اسی روز کے دوسرے میچ میں جنوبی افریقہ اور ویسٹ انڈیز کی ٹیمیں برسٹل میں مدمقابل ہونگی۔ 27 مئی کو پہلے وارم اپ میچ میں آسٹریلیا اور سری لنکا کی ٹیمیں آپس میں ٹکرائیں گی جبکہ اسی روز دوسرے وارم اپ میچ میں انگلینڈ اور افغانستان کی ٹیمیں پنجہ آزما ہونگی۔ وارم اپ مرحلے کے آخری روز 28 مئی کو پہلے وارم اپ میچ میں بنگلہ دیش کا مقابلہ بھارت سے ہوگا جبکہ اسی روز کا دوسرا اور وارم اپ مرحلے کا آخری میچ نیوزی لینڈ اور ویسٹ انڈیز کی ٹیموں کے درمیان برسٹل میں کھیلا جائے گا۔ واضح رہے کہ وارم اپ مرحلے کے ختم ہونے کے بعد آئی سی سی ورلڈ کپ 2019ء کا باقائدہ آغاز 30 سے ہوگا اور ورلڈ کپ کا ابتدائی میچ 30 مئی کو میزبان انگلینڈ اور جنوبی افریقہ کے درمیان اوول کے مقام پر کھیلا جائے گا۔

Reference: http://urdu.app.com.pk

آئی سی سی ون ڈے پلیئرز رینکنگ، بابر اعظم ساتویں، فخر زمان نویں اور امام الحق 14ویں نمبر پر برقرار

دبئی۔ 22 مئی (اے پی پی) انٹرنیشنل کرکٹ کونسل (آئی سی سی) کی تازہ ترین ون ڈے پلیئرز رینکنگ میں بلے بازوں میں بابر اعظم ساتویں، فخر زمان نویں اور امام الحق 14ویں نمبر پر برقرار ہیں، شائی ہوپ لمبی چھلانگ لگا کر ٹاپ فائیو میں شامل ہو گئے، جیسن روئے اور مشفق الرحیم کی بھی ٹاپ ٹونٹی میں انٹری ہوئی ہے، پاکستان کا کوئی باﺅلرز ٹاپ ٹونٹی میں جگہ نہیں بنا سکا، شکیب الحسن دوبارہ دنیا کے نمبر ایک آل راﺅنڈر بن گئے، انہوں نے افغانستان کے راشد خان سے ٹاپ پوزیشن چھین لی۔ بدھ کو آئی سی سی کی طرف سے جاری کردہ تازہ ترین ون ڈے پلیئرز رینکنگ کے تحت بلے بازوں میں ویرات کوہلی بدستور سرفہرست ہیں، روہت شرما دوسرے نمبر پر موجود ہیں، شائی ہوپ لمبی چھلانگ لگاتے ہوئے ٹاپ فائیو میں شامل ہو گئے، انہوں نے چوتھی پوزیشن سنبھال لی، بابر اعظم کا ساتواں اور فخر زمان کا نواں نمبر برقرار ہے، امام الحق 14ویں، جونی بیئرسٹو 15ویں، جوز بٹلر 16ویں، مورگن 18ویں اور جیسن روئے 19ویں نمبر پر آ گئے ہیں، مشفق الرحیم بھی ترقی پا کر ٹاپ ٹونٹی میں شامل ہو گئے، تمیم کا 22واں نمبر ہے، سومیا سرکار بھی ترقی پا کر 28ویں نمبر پر پہنچ گئے، بین سٹوکس 30ویں، شکیب الحسن 32ویں، سرفراز احمد 47ویں نمبر پر ہیں۔ باﺅلرز میں جسپریت بمرا بدستور پہلے نمبر پر براجمان ہیں، پاکستان کا کوئی باﺅلر ٹاپ ٹونٹی میں شامل نہیں، حسن علی 26ویں، عماد وسیم 28ویں، شاداب خان 29ویں نمبر پر ہیں، آل راﺅنڈرز میں شکیب الحسن نے ایک درجہ ترقی پا کر راشد خان سے ٹاپ پوزیشن چھین لی، راشد خان تنزلی کے بعد دوسرے نمبر پر چلے گئے، عماد وسیم چوتھے اور محمد حفیظ ساتویں نمبر پر ہیں۔

Reference: http://urdu.app.com.pk

آئی سی سی ورلڈ کپ 2019ء کا وارم اپ مرحلہ 24 مئی سے شروع ہوگا، گرین شرٹس دو وارم اپ میچز کھیلے گی

لندن ۔ 21 مئی (اے پی پی) آئی سی سی ورلڈ کپ 2019ئ، وارم اپ میچز کا سلسلہ 24 مئی سے شروع ہوگا۔ تفصیلات کے مطابق آئی سی سی ورلڈ کپ 2019ء کے وارم اپ میچز کا مرحلہ 24 مئی سے شروع ہوگا اور 5 روز جاری رہنے کے بعد 28 مئی کو اختتام پذیر ہوگا اس کے بعد ورلڈ کپ 2019ء کا باضابطہ آغاز 30 مئی سے ہوگا۔ 24 سے 28 مئی تک وارم اپ مرحلے میں ہر روز دو، دو میچز کھیلے جائینگے۔ 24 مئی کو پہلا وارم اپ میچ پاکستان اور افغانستان کی ٹیموں کے درمیان برسٹل میں کھیلا جائے گا اسی روز دوسرا وارم اپ میچ سری لنکا اور جنوبی افریقہ کی ٹیموں کے درمیان کارڈف میں کھیلا جائیگا۔ اسی طرح 25 مئی کو بھی دو وارم اپ میچز کھیلے جائینگے، پہلا میچ میزبان انگلینڈ اور آسٹریلیا کے درمیان سائوتھمپٹن میں کھیلا جائے جبکہ اسی روز کا دوسرا وارم اپ میچ بھارت اور نیوزی لینڈ کی ٹیموں کے درمیان لندن میں کھیلا جائے گا۔ 26 مئی کو کھیلے جانے والے پہلے وارم اپ میچ میں بنگلہ دیش اور پاکستان کی ٹیمیں آمنے سامنے ہونگی اور یہ میچ کارڈف میں کھیلا جائے گا۔ اسی روز کے دوسرے میچ میں جنوبی افریقہ اور ویسٹ انڈیز کی ٹیمیں برسٹل میں مدمقابل ہونگی۔ 27 مئی کو پہلے وارم اپ میچ میں آسٹریلیا اور سری لنکا کی ٹیمیں آپس میں ٹکرائیں گی جبکہ اسی روز دوسرے وارم اپ میچ میں انگلینڈ اور افغانستان کی ٹیمیں پنجہ آزما ہونگی۔ وارم اپ مرحلے کے آخری روز 28 مئی کو پہلے وارم اپ میچ میں بنگلہ دیش کا مقابلہ بھارت سے ہوگا جبکہ اسی روز کا دوسرا اور وارم اپ مرحلے کا آخری میچ نیوزی لینڈ اور ویسٹ انڈیز کی ٹیموں کے درمیان برسٹل میں کھیلا جائے گا۔ واضح رہے کہ وارم اپ مرحلے کے ختم ہونے کے بعد آئی سی سی ورلڈ کپ 2019ء کا باقائدہ آغاز 30 سے ہوگا اور ورلڈ کپ کا ابتدائی میچ 30 مئی کو میزبان انگلینڈ اور جنوبی افریقہ کے درمیان اوول کے مقام پر کھیلا جائے گا۔

Reference: http://urdu.app.com.pk

وفاقی وزیر ڈاکٹر فہمیدہ مرزا سے پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیئرمین احسان مانی کی ملاقات

اسلام آباد ۔ 21 مئی (اے پی پی) وفاقی وزیر بین الصوبائی رابطہ ڈاکٹر فہمیدہ مرزا سے پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیئرمین احسان مانی نے ملاقات کی۔ ملاقات میں ٹاسک فورس کی تجاویز کی روشنی میں کھیلوں کے حوالے سے اب تک کئے گئے اقدامات اور مستقبل میں کئے جانے والے اقدامات پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ منگل کو ہونے والی ملاقات میں چیئرمین پی سی بی نے وفاقی وزیر کو پی سی بی کے آئین اور انتظامی ڈھانچے میں متوقع تبدیلیوں پر بریفنگ دی۔ احسان مانی نے کہا کہ کھیلوں کے فروغ کے لیے ضروری ہے کہ پروفیشنلزم کو فروغ دیا جائے اور سیاسی مداخلت کا خاتمہ کیا جا ئے۔ ہم ڈومیسٹک کرکٹ کو فروغ دینا چاہتے ہیں۔ ہم صوبائی سطح پر چھ ٹیمیں بنانا چاہتے ہیں۔ صوبے اپنی سطح پر کھیل کے فروغ کے لیے کام کریں گے۔ ریجنز کا انحصار پی سی بی پر کم ہو گا۔ ملاقات کے دوران ٹاسک فورس کی تجاویز پر بات چیت کی گئی۔ اس موقع پر وفاقی وزیر ڈاکٹر فہمیدہ مرزا نے کہا کہ ہم فیڈریشنز کے انتظامی اخراجات ادا کرنے کے متحمل نہیں۔ہمیں کھلاڑیوں پر سرمایہ کاری کرنے کی ضرورت ہے۔ کھیلوں کے حوالے سے نوجوانوں کے لیے بہتر مواقع فراہم کرنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم چاہتے ہیں کہ ہر صوبے میں سے دو پسماندہ ڈسٹرکٹ کا انتخاب کیا جائے اور وہاں کھیلوں کے فروغ کے لیے سہولیات فراہم کی جائیں۔ ملاقات کے دوران ٹاسک فورس کی تجاویز پر “سپورٹس پاکستان ” کے انتظامی ڈھانچے اور عملدرآمد کمیٹی پر بات چیت کی گئی۔ اس موقع پر احسان مانی نے کہا کہ سپورٹس یو کے ، کھیلوں کے شعبے میں تعاون بڑھانے اور سپورٹس پاکستان کے لیے تعاون بڑھانے کیلئے خواہاں ہے۔

Reference: http://urdu.app.com.pk

بہتر پرفارمنس سے تنقید کرنے والوں کے اندازوں کو غلط ثابت کروںگا‘وہاب ریاض کی پریس کانفرنس

لاہور۔21 مئی(اے پی پی ) دو سال تک قومی ٹیم سے باہر رہ کر ورلڈ کپ میں جگہ بنانے والے فاسٹ بولر وہاب ریاض نے کہا ہے کہ انگلینڈ کی کنڈیشز میں جو ٹیم اچھی ریورس سوئنگ کرے گی اس کو ورلڈ کپ میں بہت فائدہ ہوگا ‘ انگلینڈ کی وکٹیں ڈرائی ہیں اور وہاں پر ریورس سوئنگ کروانے والا بولر کامیاب ہوگا ‘ میری پوری کوشش ہوگی کہ میچز کے دوران بہترین ریورس سوئنگ کروں اورمخالف ٹیموں کے بلے بازوں کو کم سے کم سکور پر آﺅٹ کروں ۔قذافی سٹیڈیم لاہور میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ دو سال تک ٹیم سے باہر رہنے سے بہت مایوسی اور فرسٹریشن کا شکار تھا لیکن اللہ کے گھر سے پوری امید تھی کہ مجھے محنت کا صلہ ملے گا اور پھر اللہ نے میری سن لی‘وہاب ریاض نے کہاکہ دو سال تک ٹیم سے باہر رہ کر بہت کچھ سیکھا ‘باﺅلنگ میں مزید تجربہ حاصل کیا‘ ورلڈ کپ میں میری بولنگ میں واضح فرق نظر آئے گا ،انہوں نے کہاکہ ڈومیسٹک میں اچھی پرفارمنس کی اور آخر کار سلیکٹرز کا اعتماد جیتنے میں کامیاب ہوگیا ‘ انشاءاللہ ان کے اعتماد پر پورا ترنے کی کوشش کروں گا ۔انہوں نے کہاکہ میرے مرحوم والد اور پوری فیملی کی خواہش تھی کہ میں ورلڈ کپ کھیلوں ‘والد صاحب تو اس دنیا میں نہیں ہیں لیکن پوری فیملی کی خوشی کا کوئی ٹھکانہ نہیں ہے ‘انہوں نے بتایا کہ کچھ روز پہلے خواب دیکھا کہ چیف سلیکٹر انضمام الحق کا فون آیا ہے اور انہوں نے مجھے ورلڈ کپ میں ٹیم کا حصہ بننے کی خبر دی اور پھریہ خواب سچ ثابت ہوگیا۔ انہوں نے کہاکہ ا نگلینڈ کی کنڈیشنز میں ون ڈے کرکٹ نہیں کھیلا،ٹیسٹ میچز کی وجہ سے وہاں کی پچز اور کنڈیشنز کا اندازہ ہے،وہاب ریاض نے کہا کہ پاکستانی ٹیم کی بیٹنگ کافی بہتر ہوئی ہے‘ انگلینڈ کے خلاف میچز میں قومی ٹیم نے مسلسل 300سے زیادہ سکور کیا ہے اور پاکستانی کی بیٹنگ نے کبھی بھی تسلسل کے ساتھ اتنا اچھا پرفارم نہیں کیا ، فیلڈنگ کی وجہ سے انگلینڈ کو ون ڈے سیریز میں پاکستان پر حاوی ہونے کا موقع ملاجبکہ باﺅلنگ میں بھی تھوڑا بہت مسئلہ نظر آیا ۔ انہوں نے کہاکہ ورلڈ کپ کا فارمیٹ 1992کے ورلڈ کپ جیسا ہے اور اس میں جیت کےلئے ہر ٹیم کو مسلسل اچھا پرفارم کرنا ہوگا‘ورلڈ کپ میں حصہ لینے والی ہر ٹیم اچھی ہے ‘پاکستانی ٹیم کے تمام کھلاڑی جیت کے جذبہ کے ساتھ ورلڈ کپ کھیلیں گے اور مجھے پوری امید ہے کہ ٹیم نہ صرف سیمی فائنل بلکہ فائنل میں بھی پہنچے گی اور ورلڈ کپ جیت کر ملک میں ٹرافی لائے گی ۔وہاب ریاض نے کہاکہ میں تنقید کرنے والوں سے نہیں گھبراتا‘ میرے بارے میں سفارشی کھلاڑی کا لیبل لگا نے والوں کو ورلڈ کپ میں اپنی پرفارمنس سے جواب دوں گا ‘میں مکمل طور پر فٹ ہوں اور کسی بھی فٹنس ٹیسٹ کو آسانی سے پاس کرسکتا ہوں ‘انہوں نے کہاکہ محمد حسنین ایک اچھا بولر ہے اور ورلڈ کپ تک اس کی بولنگ میں مزید نکھار آجائے گا‘میں بھی اسے اپنے تجربہ کی بنیاد پر گائیڈ کروں‘ وہاب ریاض نے کہاکہ 2015کے ورلڈ کپ میں بھی میری پرفارمنس اچھی تھی اور میری کوشش ہوگی کہ اپنی بہتر پرفارمنس سے تنقید کرنے والوں کے اندازوں کو غلط ثابت کروں ۔

Reference: http://urdu.app.com.pk