امریکہ: خسرے کی وجہ سے ہنگامی حالات کا اعلان کر دیا گیا

امریکہ کے شہر نیویارک میں خاص طور پر یہودی رہائشی آبادی کے علاقوں سے پھیلنے والی متعدی بیماری خسرے کی وجہ سے ہنگامی حالات کا اعلان کر دیا گیا ہے۔

نیو یارک کے بلدیہ مئیر بِل ڈی بلاسیو  نے جاری کردہ بیان میں کہا ہے کہ برکلین میں خسرہ الٹرا۔اورتھوڈوکس یہودی کمیونٹی کے رہائشی علاقوں ولئیمز برگ اور بارو پارک  سے پھیلا ہے اور اس کی روک تھام کے لئے ویکسین لگوانے کو ضروری قرار دے دیا گیا  ہے۔

انہوں نے کہا  ہے کہ ولئیمز برگ خسرے  کی پھیلاو  میں مرکز کی حیثیت رکھتا ہے اور اس پریشان کن صورتحال پر فوری توجہ دینے کی ضرورت ہے۔ خسرے کی ویکسین  پہلے استعمال کی جا چکی ہے اور قابل بھروسہ اور موئثر دوا ہے لہٰذا اس ویکسین کو نہ لگوانے والے افراد  اور اسکولوں کو جرمانہ کیا جائے گا۔

ڈی بلاسیو نے صحت کے معاملے میں حفاظتی تدابیر اختیار نہ کرنے والے بروکلین کے یشیوا نامی یہودی دینی اداروں کو عارضی طور پر بند کرنے کی وارننگ بھی دی ہے۔

نیویارک کے ہیلتھ کمیشنر ڈاکٹر اوکسیریس  باربوٹ  نے بھی کہا ہے کہ یہ متعدی بیماری ان محّلوں میں مقیم ویکسین مخالف گروپوں کی وجہ سے قابو میں نہیں آ رہی۔ یہ گروپ ویکسین کے بارے میں بے بنیاد سائنسی  معلومات پر مبنی اور خطرناک افواہیں پھیلا رہے ہیں۔

اطلاع کے مطابق موسم سرما میں خسرے کے پھیلاو کے بعد سے اب تک 285 افراد اس بیماری میں مبتلا ہو چکے ہیں اور مریضوں کی اکثریت کا تعلق  انہی یہودی رہائشی علاقوں ولئیمز برگ اور بارو پارک سے  ہے۔

بیماری  کے کنٹرول مراکز کی طرف سے جاری کردہ بیان میں ملک بھر میں بھی 465 خسرے کے مریضوں کی نشاندہی  کی طرف توجہ مبذول کروائی گئی ہے۔

واضح رہے کہ گذشتہ ماہ نیویارک کے علاقے راک لینڈ میں خسرے کی ویکسین نہ لگوانے بچوں کا اسکول جانا ممنوع قرار دے دیا گیا تھا۔

Reference: http://www.trt.net.tr/urdu